Harassment-Sexual harassment-a social issue

Sexual harassment
 
جنسی ہراسانی
جنسی طور (physical harassment)  پر ہراساں کرنا ، غیر قانونی جنسی تفریق کی ایک شکل ہے۔ دنیا میں وفاقی قانون کے تحت ، جنسی طور پر ہراساں کرنا جنسی نوعیت کا ناپسندیدہ زبانی یا جسمانی طرز عمل ہے جو کام کی جگہ پر یا تعلیمی ماحول میں کچھ شرائط کے تحت ہوتا ہے۔ اس طرح کا سلوک غیر قانونی ہےخاص طور پر  اگریہ عمل (harassment) ایسا ماحول پیدا کرےجس سے کسی طرح کی  دشمنی یا نقصان کا اندیشہ ہو ، اوراگر یہ کسی شخص کے کام یا فرم کی کارکردگی میں مداخلت کرتا ہے ، یا اگر ہراساں (Harassment)کرنے والے کے طرز عمل کی قبولیت کو ملازمت یا تعلیم میں  کامیابی کی شرط بنا دیا جاتا ہے۔

        

جنسی ہراسانی(Sexual Harassment) کے خلاف قانون سازی
جاپان ، کینیڈا ، آسٹریلیا اور متعدد یورپی ممالک سمیت متعدد دوسرے ممالک کے بھی ایسے قوانین موجود ہیں جو جنسی طور پر ہراساں کرنے سے منع کرتے ہیں۔
مساوی روزگار مواقع کمیشن (ای ای او سی) نے 1980 میں غیر قانونی جنسی طور پر ہراساں(Harassment) کرنے کے بارے میں سوالوں کے جوابات کے لئے درج ذیل ہدایات جاری کیں۔ امریکہ کی سپریم کورٹ نے 1986 میں (میرٹ سیونگس بینک بمقابلہ ونسن) ایک مقدمے میں فیصلہ سنایا کہ جنسی طور پر ہراساں کرنا ایک ایسی امتیازی سلوک ہے جو 1964 کے شہری حقوق ایکٹ کے عنوان VII کے ذریعہ ممنوع ہے۔
جنسی طور پر ہراساں (Harassment)کرنے کے طرز عمل سے متعلق ہمارے معاشرے میں مختلف نوعیت کی آرا ء ہیں  تاہم ، جنسی طور پر ہراساں کرنے کی عمومی مثالوں میں جنسی پر مبنی اشاروں ، لطیفے ، یا ایسے ریمارکس شامل ہیں جو ناپسندیدہ ہیں۔ جنسی ہراسانی اس وقت ہوسکتی ہے جب ایک فرد دوسرے پر طاقت رکھتا ہو اور اسے اس شخص کو ناپسندیدہ جنسی توجہ قبول کرنے پر مجبور کرنے کے لئے استعمال کرتا ہے۔ مثل کے طور پر اگر ایک سپروائزر ملازم کو ملازمت سے برطرف کرنے کی دھمکیاں دے کر جنسی عمل کرنے پر مجبور کرتا ہے ، تو یہ جنسی ہراساں کرنا ہے۔ یہ ساتھیوں میں بھی پایا جاسکتا ہےمثال کے طور پر ، اگر ساتھی ساتھی بار بار جنسی لطیفے سناتے ہیں ، فحش تصاویر پوسٹ کرتے ہیں یا کسی دوسرے ساتھی کو غیر منقولہ جنسی بے حرمتی کرتے ہیں۔ مرد اور خواتین دونوں ہی ہراساں کرنے والے یا جنسی ہراسانی(Sexual Harassment) کا شکار ہوسکتے ہیں۔ تاہم ، جنسی طور پر ہراسانی کا زیادہ تر شکار خواتین یا کم عمربچے ہوتے ہیں۔
امریکہ کی کانگریس نے سب سے پہلے کسی فرد کے جنسی تعلقات کی بنیاد پر امتیازی سلوک پر پابندی عائد کردی تھی جب اس نے 1964 کے شہری حقوق ایکٹ کو منظور کیا تھا۔ تاہم ، 1970 کی دہائی کے وسط تک یہ نہیں تھا کہ امریکی عدالتوں نے جنسی طور پر ہراساں کرنے کو غیر قانونی جنسی امتیاز کی ایک شکل سے تعبیر کرنا شروع کیا۔ اس وقت سے اب تک جنسی طور پر ہراساں کرنے کی شکایات بہت عام ہوگئی ہیں۔ہما رے معاشرے میں بھی اس قسم کے متعدد واقعات رونما ہوتے رہتے ہیں اور انکے خلاف قانون سازی بھی دیکھنے میں آتی ہیں ۔ متعدد ہائی پروفائل مقدمات میں ، ممتاز سرکاری عہدیداروں پر جنسی ہراسانی کا الزام عائد کیا گیا ہے۔ ان معاملات نے اس مسئلے کے بارے میں عوامی شعور میں اضافہ کیا ہے اور اس بارے میں بحث و مباحثہ شروع کردیا ہے کہ کس قسم کے سلوک کو نامناسب یا غیر قانونی سمجھا جانا چاہئے۔
یہ بھی پڑھیں: Climate change-a global issue
پھیلاؤ
بہت سے مختلف مطالعات میں جنسی طور پر ہراساں کرنے کی تعدد اور اس کی پھیلاؤ کی تحقیقات کرنے کی کوشش کی گئی ہے۔ سروے بڑے پیمانے پر مختلف اعدادوشمار فراہم کرتے ہیں جس سے یہ ظاہر ہوتا ہے کہ 30 سے ​​70 فیصد خواتین کہیں بھی اپنی زندگی کے کسی نہ کسی موقع پر جنسی طور پر ہراساں کیے جانے کا کچھ تجربہ کر چکی ہیں۔ اس وسیع پیمانے پر اس حقیقت کی وجہ ہوسکتی ہے کہ جنسی طور پر ہراساں کیے جانے والی چیزوں کے تصورات افراد اور مردوں اور عورتوں میں مختلف ہیں۔ یہ ہے ، جسے کچھ لوگ قابل قبول طرز عمل سمجھ سکتے ہیں ، دوسروں کو جنسی طور پر ہراساں کرنے کے بارے میں سوچ سکتا ہے۔
جنسی طور پر ہراساں کرنے کے پھیلاؤ کا اندازہ لگانے کا ایک اور طریقہ یہ ہے کہ سرکاری ایجنسیوں کو باضابطہ شکایات کا جائزہ لیا جائے۔ 1990 سے لے کر 1996 تک ، کام کرنے کے مقام پر جنسی طور پر ہراساں کرنے کی شکایات کی تعداد جس نے امریکی برابری روزگار مواقع کمیشن (ای ای او سی) کے پاس دائر کی تھی ، اس کی تعداد دوگنی ہوچکی ہے – ۔ اسکولوں اور کالجوں میں ہونے والے جنسی ہراساں کیے جانے کی شکایات بھی بہت زیادہ ہوچکی ہیں۔پاکستان میں بھی حالیہ واقعات میں بہت اضافہ دیکھنے کو آیا ہے۔ہندوستان کے حالات بھی کچھ مخفی نہیں ہیں۔ کشمیر میں حالیہ کرفیو کے دوران دنیا کے متعدد نامور ٹی وی چینلز نے ایسے  واقعات کی نشاندہی کی ہے۔ کالجز اور خاص طور پر یونیورسٹیز میں جنسی ہراسانی کا عمل استاتذہ کے زریعے پروان چڑھ رہا ہے۔ اس تناظر میں دنیا بھر کی یونیورسٹیز کی مثالیں زبان زد عام ہیں۔
اثرات
جب معاشرے میں جنسی ہراسانی کے اثرات کی بات کرتے ہیں تو اعدادو شمار  حیران کن ہیں۔ کیونکہ اس طرح کہ فعل کا نتیجہ کسی بھی معاشرے کے لیے شرمندگی کا باعث ہے۔
جنسی طور پر ہراساں کیے جانے سے اکثر کام یا اسکول میں متاثرہ شخص کی کارکردگی پر منفی اثرات پڑتے ہیں۔، نیز ملازم یا طالب علم کا حوصلہ ، حاضری اور دوسروں کے ساتھ کام کرنے کی صلاحیت دونوں کو نقصان پہنچ سکتا ہے۔ جنسی طور پر ہراساں کرنے سے کاروبار بھی بری طرح امتاثر ہوتا ہے اگرایسا حادثہ کسی فیکٹری میں وقوع پذیر ہو تو۔ اس فعل سے متاثرہ شخص کی نفسیاتی اور جسمانی تندرستی کو بھی نقصان پہنچا سکتی ہے۔ ایک تحقیق میں بتایا گیا ہے کہ جنسی طور پر ہراساں کرنے والوں میں سے 96 فیصد جذباتی پریشانی کا شکار ہیں ، اور 35 فیصد جسمانی ، تناؤ سے متعلقہ پریشانیوں کا سامنا کرتے ہیں۔ عام علامات میں غصہ ، خوف ، اضطراب ، خود اعتمادی ، افسردگی ، جرم ، ذلت ، شرمندگی ، متلی ، تھکاوٹ ، سر درد ، اور وزن میں کمی یا کمی شامل ہیں۔
جنسی طور پر ہراساں کرنے کے معاشرے پر بھی بالواسطہ اثرات مرتب ہو سکتے ہیں۔ لو گوں کی بہت بڑی تعداد  اس عمل کو  کرنے کو ظلم کی ایک شکل سمجھتے ہیں جس کا استعمال مرد اقتدار کے ڈھانچے کو برقرار رکھنے کے لئے کرتے ہیں۔ اسکولوں میں جنسی طور پر ہراساں کرنے سے لڑکیوں کی تعلیمی کامیابی اور معاشرتی زندگی پر برا اثر پڑتا ہے۔
دنیا کے تما م بڑے مذاہب نے اس عمل کی مخالفت کی ہے ۔دین اسلام نے عورت کو نہایت اعلیٰ مقام عطا کیا ہے جسکی مثا ل کسی بھی مذہب  یا  معاشرے میں نہیں ملتی ۔  متعلقہ قانون ساز  ادارے کواس عمل کی روک تھام کے لیے  سنجیدہ   اقدامات   کی ضرورت ہے کیونکہ ایسا عمل ہما رے معاشرے میں نہایت نقصان دہ ہے۔ اس کے لیے عوام کو بھی اپنے حصے کی ڈیوٹی سر انجام دینا ہو گی تا کی ہمارا معاشرہ اس معاشرتی   برائی سے پاک ہو سکے ۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *