Top ten coincidence in the world

دس ایسے اتفاق جو آپ کو حیران کر دیں گے

 
تاریخی اتفاق
تھامس جیفرسن اور جان ایڈمز ریاستہائے متحدہ امریکہ کے بانیوں میں سے تھے  اعلانِ آزادی کی کاوش میں  میں شامل تھے۔ 4 جولائی ، 1776 کو ، کانٹنی نٹل کانگریس نے اس دستاویز کو منظوری دے دی۔ ٹھیک 50 سال بعد ، جیفرسن اور ایڈمس دونوں کی اُسی دن  موت ہوگئی۔
 
ہوٹل ڈسکوری
 
1953 میں ، ایروا کپسینیٹ جو کے ایک ٹیلی ویژن رپورٹرتھا، لندن میں ملکہ الزبتھ کی تاجپوشی کا کے حوالے سے ری پورٹنگ کر رہا تھا۔ اپنے ہوٹل کے کمرے کے دراز میں اسے کچھ ایسی اشیا مل گئیں جو پچھلے رہائشی ہیری ہنن کے پاس سے رہ گئیں تھیں۔ ہیری ہنن جو ایک باسکٹ بال اسٹار تھا اور اتفاق سے وہ رپورٹر  ایروا کپسینیٹ کا ایک اچھا دوست بھی  تھا۔ دو دن بعد ، ایروا کپسینیٹ کو ہیری ہنن کا ایک خط موصول ہوا جس میں بتایا گیا تھا کہ اسے پیرس کے ہوٹل میوریس میں ٹائی ملی ہے جس پر اس  ایروا کپسینیٹ کا نام ہے۔ اتفاق سے پچھلے ہفتے ایروا کپسینیٹ پیرس کے اُسی ہوٹل میں مقیم رہا تھا جہاں ہیری ہنن کو اسکی  ٹائی ملی۔
 
ٹیکسی
1975 میں ، برمودا میں دو پہیوں والی گاڑی  پر سوار ایک نوجوان ٹیکسی سے ٹکرا گیا اوراُسکی اسی جگہ موت ہو گئی۔ ایک سال بعد ، اس کا بھائی بالکل اسی طرح مارا گیا: اُسی دو پہیوں کی گاڑی کو چلاتے ہوئے اور اسی ٹیکسی کے ذریعے اسی ڈرائیور کے ساتھ۔ اور اتفاقاً   اس  ٹیکسی میں وہی سافر سوار تھا جو اسکے  پہلے بھائی کی موت کے وقت سوار تھا۔
 
قتل کا بدلہ
1883 میں ، ہینری زیگلینڈ نامی ایک نوجوان نے اپنی دوست کے  ساتھ تعلقات توڑ ڈالے جسکی وجہ سے اس لڑکی نے خود کشی کر لی۔لڑکی کے بھائی نے زیگلینڈ کا پتہ لگایا اوربدلے کی غرض سے  اسے گولی مار دی- پھر اس نے اپنی جان لے لی۔ زیگلینڈ فائرنگ سے بال بال بچ گیا جب گولی اس کا چہرہ چراتی اور ایک درخت میں پیوست ہو گئی۔ برسوں بعد ، زیگلینڈ نے درخت کو  کاٹنے کا فیصلہ کیا۔ درخت اتنا بڑا تھا کہ اس نے بارود کے ساتھ اسے زمین سے اکھاڑنے کا فیصلہ کیا۔ دھماکے کی وجہ سے گولی درخت سے باہر نکل گئی اور زیگلینڈ کے سر میں جاگری جس نے اسے فوری طور پر ہلاک کردیا۔
 
جڑواں بچے
جم لیوس اور جِم اسپرنگر پیدائش کے وقت جڑواں بچے تھے۔ دونوں کے ماں باپ کی وفات کی بعد  گود لینے والے گھرانوں نے اپنے لڑکوں کا نام جیمز رکھا تھا۔ دونوں لڑکے بڑے ہوئے اور قانون نافذ کرنے والے افسر بن گئے۔ دونوں نے مکینیکل ڈرائنگ اور کارپینٹری کی تربیت حاصل کی تھی اور دونوں نے لنڈا نامی خواتین سے شادی کرلی تھی۔ ان دونوں کے بیٹے تھے ، ایک کا نام جیمز ایلن اور دوسرے کا نا م بھی  جیمز ایلن تھا۔ جڑواں بھائیوں نے اپنی بیویوں کو طلاق دے دی اور دونوں نے بیٹر  نام کی خواتین سے دوبارہ نکاح کیا۔ دونوں بھائیوں کے پاس جو کتے تھے انکا نام (TOY)بھی ایک جیسا تھا ۔
 
کتاب
عظیم اداکار انتھونی ہاپکنز کو1973 میں فیفر کی چھپنے والی کتاب جسکا نام تھا  پیٹروکا سے تعلق رکھنے والی لڑکی کے  فلمی ورژن میں آنے پر اتفاق ہوا۔ ٹرین اسٹیشن پر بینچ پر پڑے ناول کی ایک کتاب کی کاپی کو دیکھ کر ہاپکنز کو حیرت ہوئی۔ اس نے کتاب اپنے پاس رکھی ، جو فیفر کی اپنی وہی کتاب نکلی جو اس نے اپنے دوست کو دی تھی۔ کتاب اس کے دوست کی کار سے چوری ہوئی تھی اور بالآخر ٹرین اسٹیشن کا راستہ ملا جہاں ہاپکنز نے اسے پایا۔
 
 
فوٹو گرافک اتفاق
1914 میں ، ایک جرمن ماں نے اپنے نوزائیدہ بیٹے کی تصویر کشی کی۔ اس نے اسٹارس برگ کے ایک اسٹور میں تیار کی جانے والی فلمی پلیٹوں کو  پرنٹنگ کے لیے بیجھ دیا۔ لیکن پہلی جنگ عظیم کے بریک آؤٹ ہونے کی وجہ سے وہ ان کو بازیافت کرنے سے قاصر رہی۔ دو سال بعد اس نے اپنی نومولود بیٹی کی تصویر لینے کے لئے ایک سو میل دور فرینکفرٹ میں ایک فلم پلیٹ خریدی۔ .عجیب اتفاق کے ذریعہ ،اسے وہی پلیٹ فروخت کردی گئی تھی جو اس نے دو سال پہلے اپنے بیٹے کی تصویر بنانے کے لیے خریدی تھی۔انسانی  غلطی سے یا جان بوجھ کر اس پر  غیر استعمال شدہ کے طور پر نشان زد کیا گیا تھا۔ جب پرنٹ تیار ہوا تو دونوں بچے تصویر میں تھے۔
 
پراسرار  راہب
آسٹریا میں 1800s میں ، ایک معروف پورٹریٹ پینٹر ، جوزف آئینگر نے متعدد مواقع پر خود کو مارنے کی کوشش کی۔ اٹھارہ سال کی عمر میں ، اپنی پہلی کوشش کے دوران ، ایک کپوچن راہب نے اسے بچا لیا۔ وہ بچ گیا۔ چار سال بعد اسی راہب نے ایک بار پھر آئینگر کو بچالیا جب اس نے خود کو پھانسی دینے کی کوشش کی۔ آٹھ سال بعد ، آئینگر کو اپنی سیاسی سرگرمیوں کی وجہ سے غداری کے جرم میں پھانسی کی سزا سنائی گئی۔ ایک نامعلوم کاپوچن راہب کی مداخلت سے اس کی زندگی بچ گئی۔ اڑسٹھ برس کی عمر میں آئینگر نے خود کو گولی مار کر خودکشی کرلی۔ نامعلوم کیپوچن راہب نے ان کی آخری رسومات کی ادا کیں۔
 
بچے کا گرنا
1930 کی دہائی میں ڈیٹرائٹ میں ، جوزف فگلاک نامی ایک نوجوان ایک لاپرواہ ماں کی مدد کیلئے دو بار آیا۔ پہلے موقع پر ، فیگلاک سڑک پر چل رہا تھا جب بچہ کھڑکی سے گر گیا ۔ خوش قسمتی سے ، بچہ فیگلاک پر گر پڑا جو اسے پکڑنے میں کامیاب ہوگیا اور بچے  کو چوٹ نا  لگی اور نہ ہی اسے تکلیف ہوئی۔ ایک سال بعد وہی  ہی بچہ اسی کھڑکی سے دوبارہ نیچے گر گیا۔ اتفاقاً جوزف فیگلاک اسی گلی میں  ونڈو کے نیچے سے گزر رہا تھا اور ، اپنی زندگی میں دوسری بار ، اس نے بچہ کو گرتے ہوے کیچ کر لیا۔

Related

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *