weight loss by eating more–tips

Eating and weight loss
 
 
کیا آپ وزن کم(weight loss) کرنا چاہتے ہیں؟  
موجودہ دنیا  میں ٹیکنالوجی کے فروغ کے ساتھ ساتھ ورزش کا رحجان کم ہوتا جا رہا ہے۔اورفاسٹ فوڈ  کا انسانی غذا کاحصہ بننا موٹاپے کا  ایک بہت بڑا سبب ہے۔ اگر انسان سیر ہو کر کھا لے اور ورزش یا دوسری سرگرمیوں سے کنا رہ کشی کر لے تو یہی خوراک چربی کی شکل میں انسانی جسم میں  ذخیرہ ہو کر مختلف بیماریوں کا موجب بنتی ہے۔ لیکن کچھ کھانے کی اشیاء ایسی بھی ہیں جنکو چربی کی شکل میں سٹور کرنا  تقریباً نا ممکن ہے۔ان کھانوں سے حاصل شدہ کیلوری انابولک ریٹ کو بڑھایا جاسکتا ۔
 
چربی سے پاک پروٹین 50 سالوں ایلیٹ ایتھلیٹوں کا بنیادی غذا ہے۔ کیوں کہ ایسی پروٹین کا پہاڑ کھا سکتے ہیں لیکن  چربی نہیں پاسکتے ہیں۔
انسانی جسم غذائی قلت کے خلاف دفاع کی آخری لائن کے طور پر ذخیرہ شدہ جسم کی چربی کو بچانا چاہتا ہے۔ اگر زیادہ کام اور کم کھانا کھلایا جائے تو جسم ذخیرہ شدہ چربی کو استعمال کرنا شروع کر دیتا ہے۔
 
موٹے افراد جو کریش(سخت) ڈائیٹس پر چلتے ہیں ، کیلوری میں تیزی سے کمی کرتے ہیں ، ان کا جسمانی وزن میں 100 پاؤنڈ وزن کم(weight loss)ہوسکتا ہے ، پھر بھی وہ چکنائی میں مبتلا دکھائی دیتے ہیں۔ 350 پونڈ سے 250 پاؤنڈ تک ضائع ہونے کے باوجود ، وہ اب بھی موٹی دکھائی دیتے ہیں کیونکہ وہ اب بھی موٹے ہی ہوتے ہیں کیونکہ ان کے جسم میں فیٹ فی صد 25-40 فیصد ہے۔
 
 
جسمانی تبدیلی کے عمل میں دوسری اہم چیز کاربوہائیڈریٹ ہیں: گاجر ، بروکولی ، سبز پھلیاں ، پالک ، گوبھی ، پیاز ، گوبھی ، سلاد اور اس طرح کے کاربوہائیڈریٹس کو چربی میں تبدیل کرنا تقریبا ناممکن ہیں۔ ریشے دار کاربوہائیڈریٹ کو ہضم ہونے میں لگ بھگ زیادہ کیلوری کی ضرورت ہوتی ہے ۔ایک سبز لوبیا یا گاجر میں 10 کیلوری ہوسکتی ہے لیکن اس کا توڑنا اتنا گھنا اور مشکل ہے کہ اس پھلیاں یا گاجر کو سبزیوں میں شامل کرنے کے لئے جسم کو تقریبا اتنی کیلوری خرچ کرنا پڑتی ہے۔
 
 
پروٹین اور کاربوہایڈریٹس دونوں انسولین پر فائدہ مند ثر ڈالتے ہیں۔ یہ کوئی حادثہ نہیں ہے کہ پیشہ ور باڈی بلڈرز ، جو دنیا کے بہترین ڈائیٹر ہیں ، جسمانی چربی کو5 فیصد تک کم کرکےایک نہایت ہی مضبوط جسم بناتے ہیں کیونکہ ان کے کھانے کی ترکیبیں پروٹین اور فائبر پر مشتمل ہوتے ہیں۔
 دن میں 600کیلوری کی حد میں متعدد چھوٹے کھانے کھائیں جو خاص طور پر ایسے کھانے کی چیزوں پر مشتمل ہیں جو جسم میں چربی کاباعث نا بنیں۔چھوٹے کھانے / پروٹین / فائبرکے  نقطہ نظر کو کھلاڑیوں نے کئی دہائیوں سے کامیابی کے ساتھ استعمال کیا ہے ۔
 
اگر کوئی فرد کھانے کے متعدد شیڈول کو قائم کرنے کے قابل ہوتا ہے جو بنیادی طور پر ہر تین گھنٹے میں کھائے جانے والی پروٹین اور فائبر پر مشتمل ہوتا ہے تو پھر وزن بڑھنے کے  امکانات ۷۰ فیصد تک کم ہو جاتے ہیں۔
اس لیے منا سب اور ایسی غذا کا انتخاب کیا جانا چاہیے جو پروٹین ، فائبر اور کاربوہائیڈریٹ پر مشتمل ہو۔ اور اسکے ساتھ ساتھ ہر روز کچھ دیر کے لیے ورزش کرنا اپنی زندگی کا حصہ  بنائیں۔ اس پر عمل کررتے ہوئے زیادہ کھاناکھانے سے بھی وزن میں اضافہ کنٹرول میں رہتا ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Follow Us

Follow us on Facebook Follow us on Twitter Subscribe us on Youtube