Top Ten ancient inventions-ماضی کی دس اہم ترین  ایجادات 

اس پوسٹ کو سوشل میڈیا پر شیئر کریں

ماضی کی دس اہم ترین  ایجادات 

وہیل / پہیہ

 

پہیہ تقریباً  5000 قبل مسیح کی ایجاد ہے۔

جب قدیم دور کی اہم ترین  ایجادات کے بارے میں بات کرتے ہو تو پہیہ ایک  ایسی ایجا د ہے جسکا خیال سب سے پہلے زہن میں آتا ہے۔

بعض ماہرین کے مطابق اس کی ایجاد موجودہ عراق میں 5000 قبل مسیح میں ہوئی تھی ۔ یہ بالآخر 3000 قبل مسیح تک وادی سندھ کی تہذیب میں پھیل گیا۔

یہ وہ دور سمجھا جاتا ہے

مڑی ہوئی رسی

 یہ تقریباً 17،000 قبل مسیح کی ایجاد ہے۔

تاریخ کو قلم بند کرنے سے پہلے کے  زمانے سے ہی رسی انسانوں کے زیر استعمال ہے۔ اس میں استعمال شکار ، اٹھانا ، اور یہاں تک کہ درختوں  اور  پہاڑوں پر  چڑھنے کے لیے بھی ہوتا تھا۔ پہلی رسیاں انگور کی بیل سے بنی ہوتی تھیں جنکو آپس میں موڑ کر ایک مضبوط رسی کی شکل دی جاتی تھی۔انسانوں کی بنا ئی رسی کے ٹکڑے فرانس میں غاروں  میں ملے ہیں جو یہ انکشاف کرتی ہیں کہ یہ  15،000 قبل مسیح کے زمانے کی ہیں۔

قدیم مصریوں نے 4000 قبل مسیح میں رسی بنانے کے اوزار تیار کیے تھے۔

موسقی کے آلات

 موسیقی کے آلات تقریباً 50،000 قبل مسیح کی ایجاد ہیں۔

پہلے موسیقی آلات میں بانسری کو جگہ ملتی ہے جو کہ  ہڈی سے بنی ہوتی تھی۔ ان آلات کے ٹکڑے 43000 سال قبل مسیح کی غاروں میں پائے گئے ہیں۔ ابھی حال ہی میں ، 9000 قبل مسیح سے ملنے والی ہڈیوں کی بانسری بہت اچھی حالت میں دریافت ہوئی ہیں کہ انکو  اب بھی استعمال کیا جا سکتا ہے۔

 

کشتی

کشتی تقریباً 60،000 قبل مسیح کی ایجاد ہے۔

انسانوں نے 60،000 قبل مسیح اور آثار قدیمہ کے آس پاس کشتیوں سے سفر کرنا شروع کیاشواہد سے پتہ چلتا ہے کہ آسٹریلیائی آبائی آبائی باشندوں کے آباؤ اجداد نے سفر کیا آسٹریلیائی لامبوک آبنائے 50،000 قبل مسیح میں۔ قدیم مصری  2500قبل مسیح تک واٹر ٹائٹ کشیاں بنا رہے تھے۔

 

رنگ

رنگ تقریباً 400،000 قبل مسیح کی ایجاد ہے۔

جسمانی سجاوٹ اور 400،000 قبل مسیح سے رنگت کا استعمال کیا جاتا ہے اسکا استعمال پینٹنگ میں بھی ہوتا تھا ۔مثال کے طور غار پینٹنگ ایک بہت ہی مشہور فن تھا۔ قدرتی طور پر ہونے والے روغن ، جیسے آئرن آکسائڈ اور اوو چار کول   استعمال ہونے والے پہلے  رنگ تھے ۔اور یہاں تک کہایسے سامان کی  دریافتیں بھی ہوئیں جو اس مدت کے دوران چارکول اور رنگ والے مواد کو پیسنے کے لیے استعمال ہوتی تھیں۔ آخر کار ، مختلف رنگوں کا کاروبار ہوتا تھا۔

زیادہ متنوع سب سے مشکل رنگ روغن (نیلے اور جامنی رنگ) تھے ان کی قیمت زیادہ ہونے کی وجہ سے تقریبا خصوصی طور پرشاہی درباروں میں استعمال ہوتا تھا۔

 

نیزہ

یہ 400،000 قبل مسیح کی ایجاد ہے۔

اس کا انداہ لگانا مشکل ہے کہ  انسان  نے کب سے نیزہ کا استعمال کرنا شروع کیا تھا کیونکہ شروعات میں انسان لکڑی کا استعمال کافی مقاصد کے لیے کیا کرتا تھا۔ لکڑی چونکہ لمبے عرصے تک محفوز نہیں رہ سکتی اور مضبوطی کے حوالے سے بھی کمزور ہوتی ہے اس لیے انسان نے اس کا حل سوچا جو کہ نیزے کی شکل میں تھا۔

 

      یہ بھی پڑھیں:   دنیا کی دس خطرناک ترین رسمیں    

 بعض ماہر آثار قدیمہ کے مطابق  انسان نیزہ کا استعمال پچاس لاکھ سال پہلے تک کرتے رہے ہیں۔

250،000 قبل مسیح تک ، پتھروں کے بلیڈوں کے ذریعہ نیزوں کی مدد کی جارہی تھی۔

کپڑا

500،000  سے 100،000 قبل مسیح کی ایجاد ہے۔

انسان کے استعمال میں ابتدائی لباس فر ، چمڑے اور پودوں کی زندگی سے بنا تھا۔

ابتدائی طور پر یہ  بعض عناصر سے تحفظ کے لئے استعمال ہوا تھا لیکن آخر کار اسے آرائشی مقاصد کے لئے بھی استعمال کیا گیا تھا۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ ہمارے لباس کے استعمال کو ڈیٹنگ کرنے میں انسانی جسم پر  زندہ رہنے والی جوؤں کا تجزیہ کا معاون ثابت ہوا ہے کیونکہ قدیم کپڑوں کی نازک نوعیت کا مطلب یہ ہے کہ ہمارے ابتدائی دور سے کوئی مثال باقی نہیں رہتی ہے۔

 

رہائش

یہ 500،000 قبل مسیح کی ایجاد ہے۔

قدیم آدمی پناہ گاہوں اور یہاں تک کہ مذہبی استعمال کے ل غاروں کا استعمال کرتا تھا ، لیکن 500،000 قبل مسیح سے ہم نے جھونپڑیوں کی تعمیر شروع کردی۔ ٹوکیو میں ایک دلچسپ آثار قدیمہ کی دریافت نے دس عہدوں پر مشتمل ایک مکان کا انکشاف کیا ، جس میں پینٹاگون کی فاسد شکل کے ساتھ ساتھ متعدد پتھر کے اوزار بھی شامل ہیں۔

 

یہ بھی پڑھیں:     دنیا کے دس ایسے راز جنکو آج تک حل نہیں کیا جا سکا

 

آگ

یہ 1،000،000 قبل مسیح کی ایجاد ہے۔

شاید آگ انسان کی سب سے اہم دریافت ہے کیونکہ اس نے خراب خوراک سے بیماری کے امکانات کو ڈرامائی طور پر کم کردیا اور ہمارے آباؤ  اجداد  کو کنٹرول شدہ آگ کے ذریعے بڑے علاقوں کو صاف کرنے کی اجازت دی۔ اس سے بڑے پیمانے پر زمین کاشتکاری شروع کرنا ممکن ہوگیا۔

 

چاقو

یہ   2،500،000–1،400،000 ق م  کی ایجاد ہے۔

پہلے چھریوں کو پتھر وں کو رگڑ کر  بنایا جاتا  تھا۔ یہ عین ممکن ہے کہ اسی تکنیک کا استعمال دوسرے مادوں سے چاقو تیار کرنے کے لئے کیا گیا ہو ، لیکن  اُس دور میں موجود کوئی بھی چیز  بچ نہ  سکی  جو چاقو بنانے کے لیے استعمال نہ کی گئی ہو۔ ماہرین آثار قدیمہ نے پتھر کے اوزاروں کا سب سے قدیم گروہ (جسے اولڈووان کہا جاتا ہے) دریافت کیا جس کی تاریخ ڈیڑھ لاکھ قبل مسیح ہے۔ یہ آسٹریلوپیٹیکائنز اور اسی طرح کے دوسرے ہومینڈس استعمال کرتے تھے جنھوں نے شاید نسلوں  کے مابین تیاری کا علم شیئر کیا تھا۔

 

یہ بھی پڑھیں:     دنیا کی دس خطرناک ترین جگہیں

Related

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *