Abortion a social issue

Abortion 


Abortion a social issue

اسقاط حمل کیا ہے؟؟

آج کے اس پر فطن دور میں جہاں ہر شخص پریشان نظرآتا ہے وہاں ہمیں کثیر تعداد میں معاشرتی برائیاں بھی بڑھتی نظر آتی ہیں جن میں ایک معاشرتی برائی اسقاط حمل ہے۔ البتہ اگر کسی جان کو خطرہ ہو ہو تو اسقاط حمل کی طرف جانا کچھ برا نہیں ہے جس کی کچھ تفصیل یہاں بطور معلومات دی گئی ۔

اسقاط حمل کیا ہے؟اور اس کی وجوہات کیاہیں۔

اسقاط حمل میں پیدائش سے پہلے حمل کے خاتمے کو اسقاط حمل کہتے ہیں ، اس عمل کے نتیجے میں ایک ایسے انسان کی موت واقع ہو جاتی ہے جوابھیدنیا میں نہیں آیا ہوتا ۔ کچھ اسقاط حمل قدرتی طور پر ہوتے ہیں کہ جن کیسز میں  عام طور پرنومولود تیار نہیں ہوتا ہے یا اس وجہ سے کہ ماں کو کوئی چوٹ یا عارضہ ہے ،جس کی وجہ سے وہ حمل کو مدت تک لے جانے سے روکتا ہے۔ اس طرح کے اسقاط حمل عام طور پر اسقاط حمل کے نام سے جانا جاتا ہے۔ دوسرے اسقاط حمل کو مکمل طور پر معاشی برا ئی کہا جاتا ہےکیونکہ یہ جان بوجھ کرکیا جاتا ہے۔
اس مضمون کی توجہ کا مرکز اسقاط حمل ہے جو آج کے سب سے زیادہ اخلاقی اور فلسفیانہ امور میں سے ایک ہے۔ جدید طبی تکنیکوں نے اس عمل کے پھیلنے میں مزید اضافہ کیا ہے ۔اس مباحثے نے محاذ آرائیوں کو چھڑا لیا ہے ، جو کبھی کبھی پرتشدد ہوتے ہیں ، ایسے کلینک میں جہاں اسقاط حمل کیے جاتے ہیں۔
اس مضمون میں اسقاط حمل کے لئے آمادہ کیے جانے والے عام طریقوں ، اسقاط حمل سے متعلق معاشرتی اور اخلاقی امور اور اسقاط حمل کے ضوابط کی تاریخ پر تبادلہ خیال کیا گیا ہے۔
اسقاط حمل کے طریقے
آپریشن کے ذریعے
اس قسم کا  اسقاط حمل منشیات یا سرجری کے ذریعہ انجام دیا جاتا ہے اور  سب سے محفوظ اور موزوں طریقہ ہے۔ زیادہ تر حمل اوسطا 39 سے 40 ہفتوں تک رہتا ہے۔ اس مدت کو تین مراحل میں تقسیم کیا گیا ہے جسے سہ ماہی کے نام سے جانا جاتا ہے۔ پہلا سہ ماہی پہلے 13 ہفتوں پر مشتمل ہوتا ہے ، دوسرا سہ ماہی 14 سے 28 ہفتوں تک پھیلا ہوتا ہے ، اور تیسرا سہ ماہی 29 ویں ہفتہ سے پیدائش تک ہوتا ہے۔ حمل کے پہلے سہ ماہی میں اسقاط حمل کرنا آسان اور محفوظ تر ہے جب کہ دوسرے اور تیسرے سہ ماہی میں اسقاط حمل کرنے میں زیادہ پیچیدہ طریقہ کار کی ضرورت ہوتی ہے اور عورت کی صحت کو زیادہ خطرہ لاحق ہوتا ہے۔
  منشیات پر مبنی اسقاط حمل کے طریقے
منشیات پر مبنی اسقاط حمل ، جسے دوائیوں کے اسقاط حمل کے نام سے بھی جانا جاتا ہے ، عام طور پر یہ ضروری ہوتا ہے کہ عورت تصدیق شدہ حمل کے پہلے ہفتوں کے اندر دو طرح کی دوائیں لے۔ ایک طریقہ میں ، حاملہ عورت پہلے مختلف ڈرگزلیتی ہیں جو پروجیسٹرون کو روکتی ہیں۔پرجیسٹرون ایک  زنانہ ہارمون ہے جو حمل کو برقرار رکھنے کے لئے ضروری ہے۔اس طرح کی ڈرگز کا استعمال اور بہت سی بیماریوں کا موجب بنتا ہے اور گز رتے وقت کے ساتھ ان ڈرگز کے بڑھتے استعمال کی وجہ سے متعلقہ بیماریوں کی شرح میں بھی خاطر خواہ اضافہ دیکھنے میں آ یا ہے ۔
اسقاط حمل سے جُڑے معاشرتی اور اخلاقی مسائل
اسقاط حمل ہمارے زمانے کا سب سے زیادہ مشہور اخلاقی مسئلہ بن گیا ہے۔ ایک طرف اس کے حامی ہیں جو اسے عورت کی شخصی آزادی سے جوڑتے ہیں اور اسے عورت کا تولیدی حق قرار دیتے ہیں۔ دوسری طرف حامی زندگی کے حامی ہیں ، جو کسی بھی وجہ سے اسقاط حمل کی مخالفت کرسکتے ہیں یا انتہائی حالات میں صرف اسقاط حمل کو قبول کرسکتے ہیں ، جیسے حمل کی مدت تک لے جانے سے ماں کی جان کو خطرہ ہواس گروپ کے لوگ سمجھتے ہیں کہ نومولود ایک انسان ہی ہے کیونکہ وہ ماں کے پیٹ کے اندر ہماری طرح خوراک حاصل کرتا ہے ،سانس لیتا ہے۔لہٰذا اسے جینے کا پورا حق ہے۔ہاں اگر اس سے ماں کی زندگی کو خطرہ لاحق ہے تو ما ں چونکہ دنیا کا فرد ہے تو اسے بچے پر ترجیح دیتے ہوے اسقاط حمل ایک قانونی اور اخلاقی سطح پر موزوں حل ہے۔
اسقاط حمل کے معاملے کے دونوں طرف متعدد اخلاقی دلائل دیئے گئے ہیں ، لیکن اس پر اب تک کوئی اتفاق رائے یا سمجھوتہ نہیں ہوسکا ہے ، کیوں کہ عوامی پالیسی کے مباحثے میں ، دونوں گروپوں کے مختلف دلائل ہیں جو  معاملے کو دونوں اطراف میں الجھاتے ہیں۔ ایشا ئی ملکوں میں خاص طور پر اس عمل میں زیادہ تیزی سے اضافہ نوٹ کیا گیا ہے حا لانکہ اس خطے کے ممالک میں مذہب کا کافی اثرو رسوخ ہے۔
بہر حال یہ ایک  بہت بڑی سماجی اور اخلاقی برائی کے طور پر ہر معاشرے میں پھیلتا جا رہا ہے ۔اس کے خلافمثبت کاروائی کی ضرررت ہے ۔  

Related

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *