بے گھر افراد

بے گھر افراد

بے گھر افراد


   دنیا میں آ ج کڑوروں لوگ بے گھر ہیں ۔بے گھر افراد سے مراد ایسے لوگ ہیں  جن کی مناسب رہائش تک باقاعدہ قانونی رسائی حاصل نہیں ہے۔ 1980 کی دہائی کے اوائل سے ہی بے گھر لوگوں کو دنیا  میں ایک اہم معاشرتی مسئلہ کے طور پر تسلیم کیا گیا ۔اسکی وجہ متعلقہ ممالک کی تیزی سے گرتی ہوئی معاشی نمو ہے۔ بے گھر افراد کی تعداد میں تیزی سے اضافہ  کی وجہ سے انکی رہائش اور آمدنی میں امداد کے لئے وفاقی بجٹ  میں کٹوتی ہوتی ہے۔ بے گھر ہونے کے دوسرے ادوار بھی تاریخ میں کئی بار واقع ہوئے ہیں ، بشمول نوآبادیاتی عہد کے دوران۔ بیشتر دیگر صنعتی اور ترقی یافتہ معاشروں میں بھی حالیہ دہائیوں میں بے گھر آبادی میں اضافہ ہوا ہے۔
دنیا بھر میں  بے گھر افراد کی تعدادکا سہی اندازہ لگانا کافی تنازعہ کا باعث رہا ہے۔ بے گھر آبادی کے حامیوں کے مطابق  کہ کئی ملین بے گھر لوگ ہیں۔تاہم  عین درست تعداد کا اندازہ لگانا ناممکن ہے کیونکہ محققین مختلف طریقوں سے بے گھر ہونے کی تعریف کرتے ہیں اور کافی سارے کیسز میں اس معاملے کوعارضی قرار دیتے ہیں۔ کسی بھی سال میں بے گھر ہونے کی پیش گوئی کرنے والے لوگوں کی تعداد کسی بھی لمحے بے گھر ہونے والے افراد کی تعداد سے تین سے پانچ گنا ہوجاتی ہے۔

کافی ترقی یافتہ ممالک نے مردم شماری کے ذریعے بے گھر افراد کی تعداد کا درست پتہ لگانے کی کوشش کی ہے لیکن خاطر خواہ اندازہ لگانے میں ناکام رہے ہیں۔
بے گھر افراد کی میں تقریبا ہر عمر کے لوگ شامل ہیں۔ لیکن بے گھر افراد کی تعداد میں  خواتین ، بچوں اور نوجوانوں کے تناسب میں مستقل اضافہ دیکھنے میں آیا ہے۔ بیشتر لوگ انتہائی غریب اور اپنے کنبے اور دوسری معاشرتی وجوہات کی وجہ سے مجبور ہو کر بے گھر ہو جاتے ہیں۔  ایک ریسرچ کے مطابق بے گھر بالغ افراد میں سے تقریبا ایک تہائی مستقل طور پر ذہنی مریض ہیں ، اور نصف کے لگ بھگ شراب نوش یا بدسلوکی کی وجہ سے یہ زندگی جینے پر مجبور ہیں۔ 1950 کی دہائی کے دوران ، بیشتر بے گھر افراد بوڑھے ، سفید ، شرابی مرد تھے۔
بے گھر آبادی کے علاوہ ، یہاں تک کہ بڑی تعداد میں معمولی رہائش پذیر سمجھا جاتا ہے۔ انہیں غربت یا ناکافی رہائش کی وجہ سے بے گھر ہونے کا خطرہ ہے۔ ان لوگوں میں ایسے لوگ شامل ہیں جو کرایہ دار کے طور پر رہتے ہیں۔شہروں مین کافی بڑی تعداد میں  غریب گھرانے اپنی ماہانہ آمدنی کا 30سے 50فیصد یا اس سے زیادہ رہائش پر خرچ کرتے ہیں ، جس کی وجہ سے اگر وہ معاشی پریشانی کا سامنا کرتے ہیں تو انہیں بے گھر ہونے کا خطرہ لاحق ہے۔ کیونکہ غربت میں رہنے والے لوگوں کی بہت زیادہ ہے اور اس میں روزانہ کی بنیاد پر اضافہ دیکھنے کو مل رہا ہے۔
پچھلی کچھ دہائیوں  میں بے گھر افراد کی تعداد میں ڈرامائی اضافے کی وضاحت کرنے کے لئے بہت ساری وجوہات پیش کی گئیں ہیں۔ اس دور میں غربت کی کل شرح میں اضافہ ہوا ۔ ۔ اس رجحان میں شامل دیگر عوامل میں سے دائمی طور پر ذہنی مریضوں کے علاج میں بدلاؤ ، منشیات کا استعمال ، بالغوں کے انحصار کرنے والے افراد کی مدد کرنے میں کچھ خاندانوں کی نا اہلیت اور خواتین پر تشدد کی بڑھتےہوئےعوامل شامل  ہیں۔
دنیا بھر میں ، بے گھر افراد کے لئے قریب تین چوتھائی مدد نجی شعبے سے حاصل ہوتی ہے ، خاص طور پر ایسے گرجا گھروں،مساجد،سماجی بہبود کی تنظیمیں جو کھاناکھلاتے ہیں ، پناہ گاہیں چلاتے ہیں اور مفت لباس بانٹتے ہیں۔ بے گھر افراد کے لئے حکومتی سطح پر بھی پروگرام تشکیل دیے جاتے ہیں جن میں انکو کھانا ،کپڑے اور تعلیم جیسی سہولیات بھی دی جاتی ہیں ۔حال ہی میں پاکستان میں بے گھر افراد کےلیے ایسا منصوبہ شروع کیا گیا ہے جہاں بے گھر افراد کو رہنے اور کھانے کی سہولت میسر کی جاتی ہے۔دنیا بھر میں کافی ایسی تنظیمیں سرگرم ہیں جو بے گھر بچوں کو نا صرف  رہائش کی سہولیات میسر کرتی ہیں بلکہ اسکے ساتھ انکی تعلیم کےلیے بھی کام کرتی ہیں۔
ماہرین  کے مطابق یہ ایک ایسا مسلہ ہے جسکا فوری طور پر حل ہی اسے کنٹرول کرنے میں معاون ہو سکتا ہے۔

Related

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *