balochistan issue

Balochistan issue and its solutions

Balochistan issue 

 
1. اعتماد کے فرق کو پورا کرنا
اعتماد کے خسارے پر قابو پانا ہوگا جس کا مقصد بلوچستان کے عوام کے دل جیتنا ہے۔ کھلے ذہن پر مبنی مذاکرات کے ذریعے موجودہ بحران کا ازالہ اور اس ضمن میں یقین کے ساتھ کہ اس کا نفاذ ایمانداری اور تعمیل کے ساتھ کیا جائے گا تاکہ عدم اعتماد کو دور کیا جاسکے۔ حکومت کو مقامی لوگوں کی نجی فوجوں کو جابرانہ اور استحصالی نظامی کے خاتمے کے لئے اقدامات کرنے چاہئے ۔ جنگجوؤں اور سرداروں پر پابندی عائد ہونی چاہئے۔ تاہم اس کو مضبوطی سے اٹھایا جانا چاہئے  اس کے لیے حکومت کو پہلے لوگوں کو غربت اور بے روزگاری کے خاتمے کے لئے حقیقی اور مخلصانہ کوششیں کرکے مقامی لوگوں کا اعتماد حاصل کرنا چاہئے۔
2۔ مقامی مدد
یہ ترقیاتی منصوبے میں لوگوں کی شمولیت ہے جو بالآخر مثبت نتائج لے کر آئے گا۔ میگا پروجیکٹس اور دیگر ترقیاتی منصوبوں میں مقامی لوگوں کی شمولیت بیرونی لوگوں کو نوکری دینے کے بجائے ہونا چاہئے۔
3۔ صوبائی خودمختاری کو بڑھاوا دینا
جہاں قوم پرست رجحانات اور وفاقی جذبات کو کم کرنے کے لئے حکومت کی اولین ترجیح 1973 کے آئین کے مطابق صوبائی خودمختاری دینا ہوگی کیونکہ تمام جماعتیں اور طبقات اس پر متفق ہیں۔ بلوچستان کی تمام بڑی جماعتوں کے موسمی سیاست دانوں پر مشتمل ایک کمیٹی تشکیل دی جائے گی تاکہ اس صوبے میں خوشحالی امن اور ترقی کے لیےاسٹارٹیجی کے بارے میں اتفاق رائے پیدا کیا جاسکے۔ دیہی علاقوں میں بسنے والے بلوچوں کے لئے کوششوں کی ضرورت ہے تاکہ انہیں قومی دھارے میں لایا جاسکے اور انہیں مجموعی ترقی میں ایک کارآمد کردار مہیا کیا جاسکے کیوں کہ شہریاری کی شرح اب بھی بہت زیادہ نہیں ہے۔
4. امن و امان
صوبے میں امن و امان کی صورتحال کو بہتر بناتے ہوئے حکومت کی پہلی ترجیح ہونی چاہئے۔ یہ لوگ سرمایہ کاروں اور خاص طور پر غیر ملکی سرمایہ کاروں کے لئے محفوظ اور موزوں ماحول بن سکتے ہیں۔ مقامی لوگوں کی شکایات کو مسائل کے حل کے لئے طاقت کے استعمال کی بجائے مذاکرات کے ذریعے سنے جانے اور ان کو دور کرنے کی ضرورت ہے۔ امن و امان کی بحالی کے لئے ذمہ دار ایجنسیوں کو خصوصی تربیت اور مراعات دی جائیں تاکہ وہ بلوچستان کی سلامتی کی صورتحال کو بہتر بنا سکیں۔
5. مقامی سرداروں کو اعتماد میں لینا
قبائلی رہنماء بلوچستان کی پولیٹشیز کا حصہ ہیں۔ لہذا بلوچستان کے بارے میں فیصلے کرتے ہوئے داخلی حکومت کو بھی قبائلی رہنماؤں سے مشاورت کے لئے جانا چاہئے۔ حکومت کو ان کی دانشمندی ، تجربے اور اثر و رسوخ کا بہترین اور مثبت استعمال کرنا چاہئے۔ اگر ان کا صحیح استعمال کیا جائے اور ان کا استعمال کیا جائے تو ان کی اجتماعی طاقت حکومت کے لئے طاقت کا ایک بڑا ذریعہ بن سکتی ہے۔ چاروں طرف اور ہر سطح پر رجسٹریشن اور مشاورت ہونی چاہئے۔ صوبہ بھر میں پھیلے دینی مدارس کی اصلاح کی ضرورت ہے تاکہ بلوچستان میں بڑھتی ہوئی انتہا پسندی Balochistan issue کو کنٹرول کیا جاسکے۔ تاکہ بلوچستان کے عوام کو روزگار کے زیادہ مواقع مہیا کی جاسکیں اور زیادہ سے زیادہ صنعتیں اور ایکسپورٹ پروموشن پروسسینگ زون قائم کیے جائیں۔
 6. مقامی افراد کے لئے پیشہ ورانہ تربیت
گوادر بندرگاہ اقتصادی اور تزویراتی طور پر پاکستان کا ایک بہت اہم منافع ہے۔ بندرگاہ کے حوالے سے انتہائی چوکسی سیکیورٹی کو یقینی بنایا جائے۔ جہاں زیادہ ہنر مند مزدوری اور افرادی قوت پیدا کرنے کے لئے گوادر کے ساتھ ساتھ صوبے کے دیگر حصوں میں بھی متعدد پیشہ ورانہ تربیت والے شاخیں اور انسٹیٹیوٹ قائم کرنے کی ضرورت ہے۔ یہ کہنے کی ضرورت نہیں ہے کہ تعلیم کا فروغ جو کہ معیاری تعلیم کا بھی ہے وہ مختصر اور طویل عرصے کے لئے معاوضہ کورس ہے۔ یہ حکمرانی کو بہتر بنانے کے لئے انتہائی ضروری ہو گا۔
The government must take these steps to ressolve the balochistan issue

Related Posts

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *